413۔ اے شورِ طلب اے آخرِ شب اے دیدۂ نم اے ابرِ کرم

 اے شورِ طلب اے آخرِ شب اے دیدۂ نم اے ابرِ کرم

 

اے شورِ طلب اے آخرِ شب اے دیدۂ نم اے ابرِ کرم

خاموش کہ کچھ کہنا ہے گناہ ہشیار کہ چپ رہنا ہے ستم

 

اے حسن مہک، اے عشق بہک، اے شدتِ غم کے جام چھلک

اے چشمِ تحیرّ گل کو نہ تک، بیدار نہ ہو جائے شبنم

 

رستے کی تھکن سے چور بدن مجبور وطن سے دور بدن

تو چاہے تو تھم اے تیز قدم جو نہ چاہے تو چل تیار ہیں ہم

 

گو برقِ تبسّم کوند چکی پر طُورِ تحیّر قائم ہے

اے حسن! گرا چلمن کو ذرا کہیں دیکھ نہ لے کوئی نامحرم

 

گلشن میں ہے اک کہرام مچا، موسم بھی ہے سہما سہما سا

دامن کو بچا اے بادِ صبا، کانٹے ہیں خفا اَور گل برہم

 

اے شمعِ ازل چل دیدہ و دل کی محفل میں پھر رقص کریں

پروانے جنوں سے بے گانے، یونہی بھول گئے سُر، تال، قدم

 

مے خانہ ترا آباد رہے، آزاد رہے، دلشاد رہے

دو گھونٹ پلا دے مضطرؔ کو، تجھے تیرے ہی جُود و عطا کی قسم

 

دسمبر1947

اشکوں کے چراغ ایڈیشن سوم  صفحہ607

چوہدری محمد علی مضطرؔعارفی

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے