ہے دراز دستِ دعا مرا

ہے دراز دستِ دعا مرا

ہے دراز دستِ دعا مرا
امۃ القدوس
                                                                                                                       

دیباچہ

ہے
دراز دستِ دعا مرا صفحہ1۔12

 دیباچہ

بسم
اللّٰہ الرحمٰن الرحیم
ہے دراز د ستِ دُعا مرا’ آپ
کے سامنے ہے۔ یہ صاحبزادی امۃ القدوس بیگم سلمہا اللہ کے عارفانہ کلام کا مجموعہ ہے۔
اس پر تنقیدی نظر

انتساب

ہے
دراز دستِ دعا مرا صفحہ13۔18

انتساب

میں نام کس کے کروں مُعَنْوَنْ
میں اس کا کیا انتساب لکھوں!
یہ سوچتی ہوں رقم کروں کیا
اگر میں کوئی کتاب لکھوں!
ہیں کتنے پیارے، ہیں کتنے رشتے کہ جن

2۔ نعت

ہے
دراز دستِ دعا مرا صفحہ22۔28

نعت

وہ جو احمدؐ بھی ہے اور محمدؐ بھی ہے
وہ مؤیَّد بھی ہے اور مؤیِّد بھی ہے
وہ جو واحد نہیں ہے پہ واحد بھی ہے
اک اُسی کو تو حاصل ہوا

4۔ ترانہ

ہے
دراز دستِ دعا مرا صفحہ34۔36

ترانہ

اک جری اللہ نے لہرایا عَلم اسلام کا
بج رہا ہے ہر طرف ڈنکا اب اس کے نام
کا
مَردِ فارس اور احیائے شریعت زندہ باد
احمدیت، احمدیت، احمدیت زندہ باد
زندہ

5۔ دیکھو ذرا خدا را

ہے
دراز دستِ دعا مرا صفحہ37۔39

دیکھو ذرا خدا را

جس کے تھے منتظر وہ شہکار آ گیا ہے
وہ گلعزار رشکِ گلزار آ گیا ہے
دینِ محمدی کا غمخوار آ گیا ہے
وہ میرِ کاروانِ ابرار آ گیا

7۔ یادِ رفتگاں

چل
رہی ہے رِیل سی میری نظر کے سامنے
ہے
دراز دستِ دعا مرا صفحہ47۔48

یادِ رفتگاں

چل رہی ہے رِیل سی میری نظر کے سامنے
رفتگاں کی بھیڑ ہے یادوں کے گھر کے
سامنے
ذہن میں میرے چمکتے